تنویر کوہستانی

مجبوری ہے صاحب مسکرانا پڑتا ہے