قوت سماعت سے محروم 2 پاکستانی بچوں نے امریکی اسکالر شپ حاصل کرکے تاریخ رقم کردی

16سالہ عثمان کا تعلق کراچی کے علاقے لانڈھی اور بابر کا تعلق سندھ کے ضلع مٹیاری سے ہے

کم آمدن والے طبقے سے تعلق رکھنے والے ان دونوں طالب علموں کا خواب ہے کہ وہ اعلیٰ تعلیم حاصل کرکے ملک میں قوتِ سماعت سے محروم افراد کی ترقی میں کردار ادا کریں ۔ پاکستان میں موجود ادارے ڈیف ریچ کے تحت بنیادی تعلیم حاصل کرنے والے یہ دونوں بچے اب امریکا میں زیر تعلیم ہیں جہاں سے انہوں نے اپنی کہانی اشاروں کی زبان میں بتائی اور اپنے معیارِ زندگی میں بہتری کا بھی بتایا۔ ڈیف ریچ کی جانب سے دونوں طلبہ کو ماہانہ 200 ڈالر وظیفہ بھی دیا جارہا ہے۔ امریکن اسکول فار دی ڈیف میں اسکالرشپ حاصل کرنے والے پہلے دو پاکستانیوں کی خواہش ہے کہ وہ مستقبل میں بھی ملک و قوم کا نام روشن کریں۔

اسلام آباد(ویب ڈیسک)قوت سماعت سے محروم 2 پاکستانی بچوں نے شاندار کارکردگی کی بدولت امریکا میں اسکالر شپ حاصل کرکے تاریخ رقم کردی۔ 16سالہ عثمان کا تعلق کراچی کے علاقے لانڈھی اور بابر کا تعلق سندھ کے ضلع مٹیاری سے ہے اور یہ 2 ایسے بچے ہیں جنہوں نے معذوری کو اپنے خوابوں کی راہ میں حائل نہیں ہونے دیا۔قوتِ سماعت سے محروم یہ دونوں بچے اپنی شاندار کارکردگی کی بدولت امریکن اسکول فاردی ڈیف میں اسکالر شپ حاصل کرکے یہ اعزاز پانے والے اولین پاکستانی بن گئے۔ دونوں نےتعلیم کے میدان میں عمدہ کارکردگی دکھا کر امریکا میں امریکن اسکول فار دی ڈیف میں 5سال کی اسکالرشپ حاصل کی ہے۔

کم آمدن والے طبقے سے تعلق رکھنے والے ان دونوں طالب علموں کا خواب ہے کہ وہ اعلیٰ تعلیم حاصل کرکے ملک میں قوتِ سماعت سے محروم افراد کی ترقی میں کردار ادا کریں ۔ پاکستان میں موجود ادارے ڈیف ریچ کے تحت بنیادی تعلیم حاصل کرنے والے یہ دونوں بچے اب امریکا میں زیر تعلیم ہیں جہاں سے انہوں نے اپنی کہانی اشاروں کی زبان میں بتائی اور اپنے معیارِ زندگی میں بہتری کا بھی بتایا۔ ڈیف ریچ کی جانب سے دونوں طلبہ کو ماہانہ 200 ڈالر وظیفہ بھی دیا جارہا ہے۔ امریکن اسکول فار دی ڈیف میں اسکالرشپ حاصل کرنے والے پہلے دو پاکستانیوں کی خواہش ہے کہ وہ مستقبل میں بھی ملک و قوم کا نام روشن کریں۔

( خبر جاری ہے )

ملتی جلتی خبریں
Comments
Loading...